55

پنجاب حکومت اضلاع میں لاک ڈاون نافذ کرے گی جس میں 12 فیصد فی صد مثبت شرح ہے

حکومت پنجاب نے پیر کے روز اعلان کیا ہے کہ مرض کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے یکم اپریل سے 12 فیصد سے زیادہ کی کوویڈ 19 کے اضلاع میں لاک ڈاون نافذ کردیئے جائیں گے۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ، ‘لاک ڈاؤن 11 اپریل تک جاری رہے گا۔’ انہوں نے مزید کہا کہ کابینہ کمیٹی کوویڈ ۔19 کو سات دن کے بعد اس کا جائزہ لے گی۔

بزدار نے بتایا کہ صوبائی حکومت معاشی سرگرمیوں یا صنعتوں پر کوئی پابندی نہیں عائد کرے گی۔ انہوں نے کہا ، تعمیراتی ، نقل و حمل ، سامان اور صنعتی شعبے معیاری آپریٹنگ طریقہ کار (ایس او پیز) کے مطابق باقاعدگی سے کام کرتے رہیں گے۔

وزیر اعلیٰ نے کہا کہ صوبے میں شادی کے تقاریب اور دیگر اجتماعات پر مکمل پابندی ہوگی۔ ‘ماس ٹرانزٹ ٹرانسپورٹ سسٹم کو بند کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا جس میں اورنج لائن میٹرو ٹرین اور اسپیڈو بس سروس شامل ہے۔’

بزدار نے کہا کہ تمام ریستورانوں اور ہوٹلوں میں انڈور اور آؤٹ ڈور ڈائننگ پر بھی مکمل پابندی ہوگی۔ ‘تاہم ، ٹیک وے اور ہوم ڈیلیوری کی اجازت ہوگی۔’

انہوں نے کہا کہ کھیلوں ، ثقافتی اور سماجی سرگرمیوں پر پابندیاں عائد رہیں گی۔ ‘پارکس بند ہوجائیں گے۔ بازاروں اور مارکیٹوں کے لئے تجارتی اوقات شام 6 بجے تک رہیں گے جبکہ دکانیں ہفتے کے دو دن بند رہیں گی۔ ‘

بزدار نے خبردار کیا کہ اگر ایس او پیز پر عمل درآمد اور مشاہدہ نہ کیا گیا تو صورتحال مزید خراب ہوسکتی ہے۔ انہوں نے کہا ، ‘چہرے کے ماسک پہن کر آپ اپنی اور اپنے کنبہ کے افراد کی حفاظت کریں گے۔’

‘تیسری لہر زیادہ خطرناک ہے’
اپنی پریس کانفرنس کے آغاز پر ، وزیر اعلی نے کہا کہ وبائی مرض کی موجودہ لہر پہلی اور دوسری سے کہیں زیادہ خطرناک ہے۔

‘پہلے دو مراحل کے مقابلے ، تیسرا مرحلہ بہت زیادہ گہرا ہے۔ لاہور ، گوجرانوالہ ، گجرات ، راولپنڈی ، سرگودھا ، فیصل آباد اور ملتان میں زیادہ مثبت کیس ہیں۔ ‘

بزدار نے بتایا کہ لاہور میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مثبت شرح 21 پیس ریکارڈ کی گئی جو ایک تشویش ناک شماری ہے۔ ‘تیسری لہر کی وجہ سے ، اسپتال تیزی سے بھر رہے ہیں اور صحت کا نظام دباؤ میں ہے۔’

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں